http://lifesilky.com/spot-fixing-one-years-ban-on-nasir-jamshids-cricket-play

ناصر جمشید کے کرکٹ کھیلنے پرایک سال کی پابندی

پی سی بی اینٹی کرپشن ٹریبونل نےناصرجمشیدکے خلاف اسپاٹ فکسنگ کیس کا فیصلہ سنا دیا، کرکٹر ناصر جمشیدپرعدم تعاون کی شق پرایک سال کی پابندی لگادی گئی۔ناصر جمشید کچھ عرصہ پہلے اسپاٹ فکسنگ کے کیس میں زیر تفتیش تھے . ناصرجمشید پراینٹی کرپشن کوڈکی دو شقوں کی خلاف ورزی کاالزام تھا۔ پاکستان کرکٹ بورڈ کے اینٹی کرپشن ٹریبونل نے 24 نومبر کو کرکٹر ناصر جمشید کے خلاف اسپاٹ فکسنگ کیس کا فیصلہ محفوظ کر لیا تھا۔

http://lifesilky.com/spot-fixing-one-years-ban-on-nasir-jamshids-cricket-play

اسپاٹ فکسنگ کیس میں ناصر جمشید کو پی سی بی نے 13 فروری کو معطل کیا ، پی سی بی اینٹی کرپشن یونٹ نے 11 اپریل کو ناصر جمشید کے خلاف چارج شیٹ جاری کی تھی . چانچہ ناصر جمشید کو پچھلے سال فروری کے مہینے میں کرکٹ کهیلنے سے روک دیا گیا تھا تو ان پر رواں پابندی کا اطلاق صرف فروری ٢٠١٨ تک ہوگا اور جس میں صرف دو ماہ باقی ہیں.

ٹیسٹ کرکٹرکے وکیل حسن وڑائچ کا میڈیا سے گفتگو میں کہنا تھا کہ ناصر جمشید کو بکیز سے رابطوں کے الزامات سے بری کیا گیا ہے اور ان کو سزا تاہم اسپاٹ فکسنگ کیس میں عدم تعاون پرہوئی ۔
انہوں نے کہا کہ پاکستان کرکٹ بورڈ نے ان کے موکل کو بہت بدنام کیا، اس لیے وہ پی سی بی پر ہتک عزت کا دعویٰ کر سکتے ہیں۔
یہاں پر ایک اور بات بہت اہم ہے کہ فروری میں کرکٹر ناصر جمشید کو میچ فکسنگ کے شبہ میں ایک مشکوک شخص(بکی) کے ہمراہ برطانیہ میں گرفتار گیا تھا۔ اسپاٹ فکسنگ کیس میں خالد لطیف پر پانچ سال پابندی وجرمانے جبکہ شرجیل خان کو معطلی اور جرمانےکی پہلے ہی سزاسنائی جاچکی ہے۔

Comment Below

Comments